Home  
    Mayor  
    Deputy Mayor  
    Metropolitan Commissioner  
    Departments  
    KMC Directory  
    Photo Gallery  
    Video Gallery  
       
 
 
       
    Tender Information  
    KMC Function  
    Tenders  
    Grand Auctions  
    Section 144 CR.P.C  
    Notifications  
    KMC Resolution  
       
 
 
       
    Public Notice  
    Information  
    National Holidays  
    Prayer Timings  
    Archive  
       


 
 
 
 
     
  میئر کراچی وسیم اختر نے کہا ہے کہ حکومت سندھ نے پانی اور سیوریج کا نظام اپنے پاس رکھا ہوا ہے نہ تو وہ خود شہریوں کی شکایت دور کرتے ہیں اور نہ ہی منتخب بلدیاتی نمائندوں کو اختیارات دیتے ہیں-  
     
  26-Aug-2018  
     
   
     
  میئر کراچی وسیم اختر نے کہا ہے کہ حکومت سندھ نے پانی اور سیوریج کا نظام اپنے پاس رکھا ہوا ہے نہ تو وہ خود شہریوں کی شکایت دور کرتے ہیں اور نہ ہی منتخب بلدیاتی نمائندوں کو اختیارات دیتے ہیں، لوگ پانی کو ترس رہے ہیں اور سیوریج شہریوں کے گھروں میں داخل ہو رہا ہے یہ بات انہوں نے گارڈن ایسٹ میں سیوریج کا پانی گھروں میں داخل ہونے کی اطلاع پر وہاں کا دورہ کرتے ہوئے کہی، قائم مقام ایم ڈی واٹر بورڈ اسد اللہ اور دیگر افسران بھی ان کے ہمراہ تھے، میئر کراچی نے کہا کہ منتخب بلدیاتی نمائندوں اور اداروں کو ان کا جائزہ حق دیا جائے، ان کے اختیارات جب تک انہیں منتقل نہیں کئے جاتے شہر میں مربوط ترقی ممکن نہیں، میئرکراچی نے کہا کہ تمام اسٹیک ہولڈرز مل کر بیٹھیں اور کراچی کی بہتری ،ترقی کے ون پوائنٹ ایجنڈے پر بات کریں تو ہی مسئلوں کا حل نکل سکے گا، انہوں نے کہا کہ کئی علاقے ایسے ہیں جہاں پانی اور سیوریج کے مسائل ہیں اور شہری ان مسائل کے ہاتھوں بے انتہا پریشان ہیںان کی پریشانیوں کو دور کرنے اور ان کے مسائل کو حل کرنے کے لئے بلدیاتی اداروں کو خود مختاری دی جائے اور فنڈز فراہم کئے جائیں، میئرکراچی نے کہا کہ وفاقی حکومت کراچی کی ترقی کے لئے بڑے پیمانے پر ترقیاتی کام کرانے میں اپنا کردار ادا کرے، انہوں نے کہا کہ گارڈن ایسٹ میں سیوریج کے پانی کا اس طرح گھروں میں داخل ہونا باعث تشویش ہے، میئر کراچی نے کہا کہ واٹر بورڈ اپنے فرائض کی ادائیگی میں کوتاہی کر رہا ہے جس کے باعث اس طرح کی صورتحال جگہ جگہ دیکھنے کو ملتی ہے، پانی نہ آنے کے باعث شہریوں کو مشکلات کا سامنا ہے اور خصوصاً بچوں اور خواتین کو شدید دشواریوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے، میئر کراچی اس موقع پر قائم مقام ایم ڈی واٹر بورڈ سے کہا کہ وہ گارڈن ایسٹ میں سیوریج اور پانی کے مسائل کو حل کریں اور پانی کی مسلسل فراہمی کے لئے نظام الاوقات قائم کریں انہوں نے کہا کہ کراچی میں کئی ادارے کے ایم سی کے متوازی طور پر کام کررہے ہیں جس کے باعث انتظامی دشواریاں بڑھتی جارہی ہیں، میئر کراچی نے کہا کہ اب سیاست سے بالاتر ہو کر شہریوں کو خدمات کی فراہمی ضروری ہے انہوں نے کہا کہ کراچی کے شہریوں کے ساتھ بہت ظلم ہوچکا اور انہیں ان کا حق نہیں دیا گیا، انہوں نے کہا کہ کراچی سارے پاکستان کو پالتا ہے ، سب سے زیادہ ریونیو فراہم کرتا ہے لیکن سب سے کم فنڈز کراچی کے حصے میں آتے ہیں، انہوں نے کہا کہ کے ایم سی کو او زیڈ ٹی کی مد میں12ارب روپے ملنے چاہئیں لیکن ہر سال6ارب روپے فراہم کئے جاتے ہیں جس کے باعث ترقیاتی امور تو درکنار ملازمین کو تنخواہیں دینا بھی دشوار ہے، میئر کراچی نے کہا کہ دنیا بھر میں پانی، سیوریج، صفائی ستھرائی، پراپرٹی ٹیکس، موٹر وہیکل ٹیکس اور دیگر بلدیاتی امور ایک ہی بلدیاتی ادارے اور میئر کے پاس ہوتے ہیں لیکن کراچی میں 13اداروں میں یہ اختیارات تقسیم کردیئے گئے ہیں اور سندھ گورنمنٹ کی من مانیاں اور ایس ایل جی اے میں ترامیم کرکے مزید اختیارات چھینے جاتے ہیں انہوں نے کہا کہ اس طرح مسائل کم ہونے کے بجائے بڑھتے چلے جائیں گے۔  
     
     
   
     
     

 

 

 

 

 
 
     
 

Copyright © 2011-2012 Karachi Metropolitan Corporation. All rights reserved.
The KMC will not be responsible for the content of external internet sites. / Login  / Webmail  / Webmail 2  / 1339 Executive Dashboard