Home  
    Mayor  
    Deputy Mayor  
    Metropolitan Commissioner  
    Departments  
    KMC Directory  
    Photo Gallery  
    Video Gallery  
       
 
 
       
    Tender Information  
    KMC Function  
    Tenders  
    Grand Auctions  
    Section 144 CR.P.C  
    Notifications  
    KMC Resolution  
       
 
 
       
    Public Notice  
    Information  
    National Holidays  
    Prayer Timings  
    Archive  
       


 
 
 
 
     
  کے الیکٹرک کے کھمبے میں کرنٹ کی وجہ سے تین بچے ہلاک ہو گئے تھے۔ میئر کراچی وسیم اختر نے ان بچوں کی ہلاکت کی ایف آئی آر درج کرانے میں ورثاء کی مدد کی-  
     
  14-Aug-2019  
     
   
     
  کے الیکٹرک کے پول سے ہلاک ہونے والے تین افراد کے ورثا نے میئرکراچی وسیم اختر کی موجودگی میں درخشاں تھانے میں کے الیکٹرک کے مالک عارف نقوی۔ سی او مونس عبداللہ علوی۔ چیئرمین اکرام سہگل اور دیگر کے خلاف ایف آئی آر درج کرائی ،ایف آئی آر میں درج کیا گیا کہ ملزمان کی غفلت سے تین افراد ہلاک ہوئے ان کے خلاف زیر دفعہ 322، 34/ 268 کے تحت کارروائی کی جائے حالیہ بارشوں کے دوران شہر میں 33 سے زائد افراد کے الیکٹرک کے پولز اور تاروں میں کرنٹ کی وجہ سے ہلاک ہوئے۔جن میں سے عید سے ایک روز قبل درخشاں تھانے کی حدود میں کے الیکٹرک کے کھمبے میں کرنٹ کی وجہ سے تین بچے ہلاک ہو گئے تھے۔ میئر کراچی وسیم اختر نے ان بچوں کی ہلاکت کی ایف آئی آر درج کرانے میں ورثاء کی مدد کی اور 6 گھنٹے درخشاں تھانے میں موجود رہے۔ اس موقع پر میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے میئر کراچی وسیم اختر نے کہا کہ ہلاک ہونے والوں کی موت پر سیاست نہیں شہریوں کو انصاف دلانا مقصد ہے۔ میئر کراچی کی حیثیت سے ہلاک شہریوں کے ورثاء کے ساتھ کھڑا ہوں ۔کراچی کے شہری کے الیکٹرک کی غفلت سے کرنٹ لگنے سے ہلاک ہو رہے ہیں کوئی پوچھنے والا نہیں۔انہوں نے کہا کہ کے الیکٹرک کی غفلت سے ہلاک ہونے والے 33 افراد میں سے 16 بچے ماں باپ کے اکلوتے تھے ہلاک ہونے والے باقی افراد کے ورثاء کی طرف سے بھی ایف آئی آر درج کی جائے، انہوں نے کہا کہ ان ایف آئی آرز کی روشنی میں سپریم کورٹ میں مقدمہ دائر کیا جائے گا، کراچی کے شہریوں کو یتیم نہیں چھوڑا جا سکتا۔ اس سے قبل شہر کے دورے اور کے لیکٹرک کے پولز اور تاروں میں کرنٹ کے باعث ہلاک ہونے والوں کے گھروں پر تعزیت کے بعد شاہ فیصل کالونی میں میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے میئر کراچی وسیم اختر نے کراچی کو آفت زدہ شہر قرار دیا اوروزیراعظم عمران خان سے درخواست کی کہ کراچی تباہ ہو گیا لوگ مر رہے ہیں مدد کو آئیں،دیگر شہروں کے لوگ نماز عید کے بعد قربانی کرتے ہیں کراچی کے عوام جنازے دفنا رہے ہیں، انہوں نے کہا کہ حکومت سندھ نے کے الیکٹرک سے پوچھا تک نہیں کہ کراچی کے عوام کو کیوں قتل کیا جا رہا ہے۔کراچی کے تین کروڑ لوگوں کا میں نمائندہ اور کراچی کے عوام کی آواز ہوں لہٰذا لوگوں کو اس طرح مرتے نہیں دیکھ سکتا۔ وزیر اعظم کراچی کو بچانے کے لیے مداخلت کریں انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم کے ساتھ 25 ارب کراچی اور 5 ارب حیدرآباد کے لئے جو معاہدہ ہوا تھا وہ رقم کب ملے گی تاکہ لوگوں کے مسائل حل کئے جائیں۔  
     
     
   
     
     

 

 

 

 

 
 
     
 

Copyright © 2011-2012 Karachi Metropolitan Corporation. All rights reserved.
The KMC will not be responsible for the content of external internet sites. / Login  / Webmail  / Webmail 2  / 1339 Executive Dashboard