Home  
    Mayor  
    Deputy Mayor  
    Metropolitan Commissioner  
    Departments  
    KMC Directory  
    Photo Gallery  
    Video Gallery  
       
 
 
       
    Tender Information  
    KMC Function  
    Tenders  
    Grand Auctions  
    Section 144 CR.P.C  
    Notifications  
    KMC Resolution  
       
 
 
       
    Public Notice  
    Information  
    National Holidays  
    Prayer Timings  
    Archive  
       


 
 
 
 
     
  بلدیہ عظمیٰ کراچی نے اپنے زیر انتظام اسپتالوںاور فائر اسٹیشنوں کے احاطوں میں واقع رہائش گاہوں سمیت سرکاری رہائش گاہوں میں بھی نصب ایئر کنڈیشنز ہٹا دیئے ہیں  
     
  02-Aug-2019  
     
   
     
  بلدیہ عظمیٰ کراچی نے اپنے زیر انتظام اسپتالوںاور فائر اسٹیشنوں کے احاطوں میں واقع رہائش گاہوں سمیت سرکاری رہائش گاہوں میں بھی نصب ایئر کنڈیشنز ہٹا دیئے ہیں ساتھ ہی ساتھ مکینوں کو اس بات کا پابند کردیا گیا ہے کہ وہ علیحدہ سے اپنے میٹر نصب کرائیں اور بل بھی خود ہی ادا کریں، بلدیہ عظمیٰ کراچی اس مد میں کسی بھی طرح ان کے ساتھ رعایت نہیں کرے گی، جو مکین اپنے گھروں میں اسپتالوں یا فائر اسٹیشنوں کو فراہم ہونے والی بجلی استعمال کررہے ہیں وہ فوری طور پر اس اقدام سے باز آجائیں وگرنہ ان کی بجلی منقطع کرنے کے علاوہ ان کے خلاف تادیبی کارروائی کی جاسکتی ہے، یہ بات میٹروپولیٹن کمشنر ڈاکٹر سید سیف الرحمن نے جمعہ کی صبح اپنے دفتر میں منعقدہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی، اجلاس میں ڈائریکٹر اکوموڈیشن عبدالمتین صدیقی ، سپرنٹنڈنٹ انجینئر الیکٹریکل اینڈ میکینکل انیس احمد خان اور دیگر نے شرکت کی، اجلاس میں بتایا گیا کہ اس سے قبل گزشتہ ماہ بھی بلدیہ عظمیٰ کراچی نے اپنے زیر انتظام 14 بڑے اسپتالوں میں رہائش پذیر مکینوں کو اس بات کا پابند کردیا تھا کہ وہ اپنے بجلی کے میٹر علیحدہ سے نصب کرائیں جبکہ اسی حوالے سے گذدرآباد جنرل اسپتال میں ان مکینوں کی بجلی بھی منقطع کردی گئی تھی جو اپنے گھروں کو اسپتال کے میٹر سے چلا رہے تھے، اجلاس میں بتایا گیا کہ بلدیہ عظمیٰ کراچی کے اسپتالوں، فائر اسٹیشنوں اور سرکاری رہائش گاہوں کو ملا کر مجموعی طور پر 2700 رہائشی مکانات ہیں جن میں علیحدہ سے بجلی کے میٹرز لگوانے کے لئے مکینوں کو ہدایات جاری کردی گئی ہیں، اس سلسلے میں کے الیکٹرک حکام سے بلدیہ عظمیٰ کراچی کا رابطہ بھی ہے اور کے الیکٹرک نے اس حوالے سے ایک MoU دستخط کرنے کی خواہش کا اظہار کیا ہے جبکہ کے الیکٹرک کی جانب سے موصول ہونے والے اس MoU کا مسودہ بلدیہ عظمیٰ کراچی کے محکمہ قانون کے پاس ابھی مشاورت کے لئے موجود ہے ، میٹروپولیٹن کمشنر ڈاکٹر سید سیف الرحمن نے اس موقع پر سخت ہدایت دیتے ہوئے کہا کہ آئندہ کے ایم سی کے کسی بھی ادارے کی حدود میں واقع رہائشی مکینوں کو خود اپنے سب میٹر استعمال کرنے چاہئیں نہ کہ ادارے کی بجلی سے غیر قانونی طور پر بجلی حاصل کرکے اپنے گھروں کو چلانا چاہئے، انہوں نے کہا کہ کے ایم سی کے زیر انتظام 14 بڑے اسپتال ہیں جن میں تقریباً246 رہائشی مکانات موجود ہیں جنہیں یہ ہدایت کردی گئی ہے کہ وہ اپنے سب میٹرز لگوائیں اور جن کے پاس پہلے سے سب میٹرز موجود ہیں وہ انہیں استعمال کریں اور اس کا بل بھی خود ہی ادا کریںتاکہ ادارے پر کوئی اضافی بوجھ نہ پڑے، انہوں نے کہا کہ بلدیہ عظمیٰ کراچی کے کسی بھی محکمے / شعبہ جات کی حدود میں قائم رہائشی کوارٹرز کے مکین اپنے بجلی کے بل خود ادا کریں گے اور بجلی کے حصول کے لئے اپنے سب میٹرز استعمال کریں گے اگر کسی بھی رہائشی کوارٹرز کے مکین اپنے کوارٹر میں کے ایم سی کے محکمے سے بجلی چراتے ہوئے پائے گئے تو ان کے خلاف کارروائی کی جائے گی اور ایف آئی آر بھی درج کرائی جائے گی۔  
     
     
 
News Photo Gallery
 
 
 
 
 
 
 

 
     
     

 

 

 

 

 
 
     
 

Copyright © 2011-2012 Karachi Metropolitan Corporation. All rights reserved.
The KMC will not be responsible for the content of external internet sites. / Login  / Webmail  / Webmail 2  / 1339 Executive Dashboard